0

مسیحا قاتل بن گئی،نرس نے 8بچوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا افسوس ناک سانحہ کہاں پیش آ یا

لندن(ویب ڈیسک) بر طانوی کے دارلحکومت لندن میں تیس سالہ نرس جو کہ بچوں کے وارڈ میں ڈیوٹی پر معمور تھی نے آٹھ بچوں کی جان لے لی جس میںدو تڑواں بچے بھی شامل تھے۔لوسی لٹبے کو کورٹ میں پیش کیا گیا تو اس پر آٹھ بچوں کے قتل اور دس بچوں کے قتل کی کوشش کا الزام عائد کیا گیا تھا۔2018سے اب تک خاتون کو تیسری بار گرفتار کیا گیا تھا۔نرس کے ہاتھوں موت کے منہ میں جانے والے سارے بچوں کی عمریں ایک سال سے کم ہی تھیں۔جبکہ دس بچے جن کے قتل کی کوشش کی گئی ان میں سے پانچ لڑکے تھی اور پانچ ہی لڑکیاں تھیں۔خاتون نرس پر لگائے گئے کیس 2015سے شروع ہوتے ہیں اور تب سے اب تک نرس کو کئی بار گرفتار بھی کیا گیا۔
خاتون سے متعلق بتایا گیا ہے کہ اس نے چیسٹر یونیورسٹی سے گریجوایشن کی ہے اور اس دوران 3ملین فنڈ ریزنگ کی چیرٹی کمپین میں بھی حصہ لیا تھا۔جس کے بعد اس نے اسپتال میں نوکری کرنا شروع کی تھی۔جس وارڈ میں یہ نرس نوکری کررہی تھی وہاں کے بچوں کی اموات ایوریج سے زیادہ تھیں جس بنا پر پولیس نے تحقیق شروع کی تھی اور نرس کو مجرم پایا تھا۔جتنے بچوں کی اموات کا الزام تیس سالہ نرس پر لگایا گیا ہے یہ سبھی بچہ وارڈ میں نرس کی زیرکفالت تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں