0

حکومت کے لئے ایک اور مشکل کھڑی ہو گئی ملک کے اہم طبقے کا اسلام آباد کی طرف مارچ کا اعلان

لاہور(ویب ڈیسک) پاکستان کسان اتحاد کے لاہور میں دوسرے روز دھرنے اور احتجاج کے دوران پولیس سے جھڑپیں ہوگئیں جس میں 20 مظاہرین کو گرفتارکرلیا گیا۔ٹھوکر نیاز بیگ میں سڑک دونوں اطراف سے بند کرنے کی کوشش اور روکنے پر کسانوں نے پولیس پر پتھراؤ کیا جس پر پولیس نے لاٹھی چارج اور واٹر کینن کا استعمال کرتے ہوئے گرفتاریاں شروع کردیں، اس دوران علاقہ میدان جنگ بنا رہا، پولیس ایکشن کے بعد کسان ٹھوکر نیاز بیگ سے منتشر ہوگئے جس کے بعد ٹریفک کو بحال کر دیا گیا۔ایس پی صدر حفیظ الرحمان بگٹی کے مطابق پتھراؤ سے پولیس کے کئی جوانوں سمیت ایک راہگیر بزرگ زخمی ہوگئے جب کہ ڈی آئی جی آپریشنز لاہور اشفاق خان نے جائے وقوعہ کا دورہ کیا اور میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ ایک روزقبل کسان اتحاد کےرہنماؤں سے ملاقات میں مسئلہ حل کرنے کوشش کی گئی۔پکڑ دھکڑ کے بعد کسان اتحاد نے وحدت روڈ پر دھرنا دیئے رکھا اور کسانوں کے رہنما شوکت علی نے کہا کہ احتجاج ختم نہیں کر رہے صرف حکومت کو وقت دے کر جارہے ہیں تاہم شام کو کسان اتحاد اور پنجاب حکومت کے درمیان مذکرات کامیاب ہوگئے جس کے بعد انہوں نے دھرنا ختم کرنے کا اعلان کردیا۔ کسان اتحاد کے رہنماؤں کا کہنا تھا کہ مطالبات منظور نہ ہوئے تو 10 نومبر کو اسلام آباد جائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں