0

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کیس کے فیصلہ دراصل کس کے خلاف ہے وفاقی وزیر قانون نے سب بتا دیا

اسلام آباد(نیوزڈیسک ) وفاقی وزیر قانون فروغ نسیم کا کہنا ہے کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کیس کے فیصلے میں ہماری تمام باتیں تسلیم کر لی گئی ہیں تو ہم نظرثانی کیوں فائل کریں گے۔وفاقی وزیر قانون کا مزید کہنا تھا کہ جسٹس فیصل عرب نے کہا کہ پیٹشنرکے پاس بہت اچھا موقع ہے اپنے اپ کو ثابت کرنے کے لئے، مجھے میڈیا سے ہی پتا چلا کہ ایف بی آر نے کئی سماعتیں کی ہیں۔ سپریم جوڈیشل کونسل کی سماعتیں مخفی ہوتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس ریفرنس میں جھوٹ ہوتا یا ان کی لندن پراپرٹی نہیں نکلتی تو ہمارے خلاف زبردست فیصلہ آنا تھا۔ عدالت کی طرف سے کیس ایف بی آر کے پاس بھیجنے کا مقصد ہی یہی ہے کہ معاملہ وہاں جائے اور سوال و جواب ہوں۔

وفاقی وزیر قانون کا کہنا تھا کہ ایف بی آر میں اگر منی ٹریل دے دی جاتی ہے تو معاملہ ختم ہو جاتا ہے۔ وفاق، وزیراعظم، صدر یا میری کسی قسم کی بدنیتی قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف نہیں ہے، تمام کی تمام باتیں ہماری تسلیم کی گئی ہیں، پورے فیصلے میں کوئی بھی ججمنٹ ہمارے خلاف ہے نہ ہی صدر کے خلاف ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں